Hub Ka Sartaaj Amal | حب کا سرتاج عمل

عمل ہٰذا اس فن کے عاملین کا مانا ہوا عمل ہے ۔ دراصل اس عمل میں وہ تمام آیات استعمال ہوئی ہیں جو محبت کے سلسلے میں قرآن کریم میں آئی ہیں اگر مطلوب کا دل پہاڑ سے بھی زیادہ سخت ہو تو بھی اس عمل کی تسخیر میں آنے سے نہیں بچ سکتا ۔ یقین کیجئے کہ آپ نے اگر اس عمل کو صحیح طریق سے کرلیا تو ضرور کامیاب ہونگے ۔ اور میرے یقین کے ممد و معاون ثابت ہونگے ۔ اس عمل کو کئی طریقوں سے کیا جا سکتا ہے میں چند ایک طریقے تحریر کرتا ہوں آپ کو جو مناسب لگے اور جس پر آپ کو یقین کامل ہو آپ اس پر عمل کریں یا اگر کوئی اور طریقہ آپ کے ذہن میں ایسا ہو جو کہ قواعد عملیات پر پورا اترتا ہو تو آپ اس طریقے سے کریں میں خوامخواہ آپ کو مجبور نہیں کرتا کہ آپ میرے طریق پر ہی عمل کریں ۔
اس عمل کو ایک مرتبہ پڑھ کر عمدہ سے عطر پر دم کریں اور مطلوب سے ملاقات کریں ، فریفتہ ہوگا ۔ خوشبودار پھولوں پر بھی دم کیا جا سکتا ہے ۔
گلاب و کیوڑہ ڈال کر شیریں شربت تیار کریں اور مندرجہ ذیل عمل ایک مرتبہ یا تین مرتبہ پڑھ کر شربت پر دم کرکے تیز زبان مطلوب کو پلائیں اس کی زبان شربت کی طرح شیریں ہوجائے گی ۔

اگر مطلوب دور ہو تو اس عمل کو روزانہ بعد از نماز عشاء سات بار سات دن تک پڑھیں مطلوب کی حاضری کا تصور رکھیں اور بعد عمل مطلوب کی تصویر پر دم کریں اگر تصویر نہ ہو تو مطلوب کو تصور میں لا کر دم کریں مطلوب بے قرار ہو جائے گا۔

ایک طریقہ یہ ہے کہ اس عمل کو ہد ہد پرندہ کے خون سے لکھ کر پھل دار درخت پر لٹکائیں ( جبکہ قمر و زہرہ یا قمر و مشتری میں سعد نظر ہو ) اس طرح کہ کسی کا سایہ اس پر نہ پڑے ۔ جیسے جیسے یہ کاغذ ہلے گا مطلوب کا دل طالب کی یاد میں پھڑکے گا اور ملاقات کئے بغیر چین نہ پائے گا۔

اس عمل کو روزانہ دس روز تک رات کے وقت دس کالی مرچوں پر ایک ایک مرتبہ پڑھ کر دم کریں اور آگ میں ڈالتے جائیں ۔ دس دن میں ایک سو کی تعداد پوری ہوجائے گی اور اسی درمیان مطلوب حاضر ہو کر محبت کا دم بھرے گا ۔ اس عمل کے دوران مطلوب کا تصور بے حد رکھیں گویا مطلوب سامنے کھڑا ہے اور آپ کالی مرچیں اس کے دل پر مار رہے ہیں ۔

ایک طریقہ یہ ہے کہ اس عمل کو گلاب و زعفران سے لکھ کر اپنے بازو پر باندھیں اور روزانہ اس عمل کو اپنی ہمت کے مطابق پڑھیں خدا نے چاہا تو بہت جلد کامیابی ہوگی ۔

یہ طریقہ بڑا عجیب ہے اور ایک راز ہے کراچی کے ایک عامل سید فخر الدین عالم نے یہ طریقہ بتایا تھا ایسا کریں کہ حسب ضرورت بازار سے موم خرید کرلائیں اور اسے محبوب کا پتلا بنائیں ۔ اگر محبوب مرد ہے تو مرد کی شکل و صورت کا پتلا بنایا جائے اور اگر محبوب عورت ہے تو عورت کی شکل و صورت کا پتلا بنایا جائے ۔ یہ ضروری نہیں کہ ہو بہو مطلوب کی صورت کے مطابق ہو بلکہ فرضی شکل بنائیں ۔

اب اگر یہ عمل آپ کسی مرد کے لئے کر رہے ہیں تو ایک عدد دیسی مرغ کا دل لیں یا اگر عورت کے لئے عمل کر رہے ہیں تو ایک عدد دیسی مرغی کا دل لیں اور
اس دل کو اس پتلے کے دل کے مقام پر رکھ کر موم سے بند کردیں یعنی پتلے کا سینہ ہموار کردیں۔ اس کے بعد ایک بڑی سوئی لیں (جس سے رضائیاں وغیرہ سیتے ہیں )اور ایک مرتبہ ذیل کا عمل پڑھ کر اس سوئی پر دم کریں اور اسے پتلے کے دل میں اس طرح چبھوئیں کہ آر پار ہوجائے اگر چاہیں تو مطلوب کا نام مع والدہ لکھ کر اس پتلے کے سر میں رکھ کر موم سے بند کردیں ۔

اب ایک کاغذ پرسیاہ روشنائی سے ذیل کا عمل تحریر کریں ۔ اس کے بعد ایک عدد مٹی کی ہانڈی لے کر اس کو پانی سے بھر دیں اور اس میں وہ پرچہ (جس پر آپ نے عمل لکھا ہے ) ڈال کر اچھی طرح ہلائیں یا کچھ دیر بھیگا رہنے دیں تاکہ حروف کی سیاہی پانی میں شامل ہوجائے ۔ اب اس موم کے پتلے کو جو آپ نے تیار کیا ہے اور جس میں سوئی چبھوئی ہے اس پانی سے بھری ہانڈی میں ڈال کر اس ہانڈی کو سرپوش سے ڈھانپ دیں اور ساری رات چولہے پر ہلکی آنچ پر رکھیں ۔ اس بات کا خیال رکھیں کہ آنچ اس قدر تیز نہ ہو کہ پانی گرم ہو کر موم پگھل جائے اگر ایسا ہوا تو اس سے دو قسم کے نقصان کا اندیشہ ہے ۔
ایک نقصان تو یہ ہے کہ آپ کا عمل بے کار ہوجائے گا۔
دوسرا یہ کہ اگر بے کار نہ ہوا تو اس قدر شدید اثر کرجائےگا کہ مطلوب کی جان کی خیر نہیں۔ اس لئے آنچ بہت ہی کم رکھیں اتنی کہ پانی نیم گرم رہے ۔ اس عمل کی بدولت مطلوب طالب کی محبت کے سمندر میں غرق ہوجائے گا ۔ اس کا دل طالب سے ملنے کے لئے ڈوبا جائے گا اور بہت جلد حاضر ہو کر محبت کا دم بھرے گا
مجرب ہے ۔

نوٹ : ۔ اس عمل کی تیاری میں تمام لوازمات عمل کا خیال رکھیں تاکہ عمل میں کامیاب ہو کر آپ مجھے اچھے لفظوں میں یاد رکھیں

اوپر بیان کردہ طریقوں کے علاوہ اگر کوئی شخص ویسے ہی اس عمل کو روزانہ یا ہفتہ عشرہ یا مہینہ میں صرف ایک مرتبہ پڑھ لیا کرے تو تمام خلقت اس کی مطیع و فرمانبردار ہوگی اور اپنے گرد چاہنے والوں کا ہجوم دیکھے گا بعض نے لکھا ہے کہ زندگی میں ایک مرتبہ پڑھ لے تب بھی اس کے انورات کا مشاہدہ ہوگا میں امید کرتا ہوں کہ اس عظیم عمل کی قدر کریں گے ۔









Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*